love, two, couple-3189898.jpg

Novel____My Possessive Mafia

Writer_____Barbie Boo

Episode____3 to 5

لیو پلیز!

وہ رونی شکل بناتے ہوئے بولی۔

ٹھیک ہے جارہا ہوں۔ اس سے پہلے کہ تم چلانا شروع کردو۔

وہ ہنستے ہوئے ڈریسنگ روم سے باہر نکلتے باتھروم چلا گیا۔

روبی کی اٹکی ہوئی سانس بحال ہوئی تھی۔

وہ شاور لے کے باہر نکلا تو روبی ڈریسنگ ٹیبل کے سامنے کھڑی خود کو سنوارنے میں مصروف تھی۔

لیو باتھ ٹاول پہنے بالوں میں ہاتھ پھیرتے دھیرے سے چلتے ہوئے روبی کے پیچھے جاکر کھڑا ہوگیا۔

تو تیار ہورہی ہو بیگم صاحبہ۔ قد زیادہ چھوٹا نہیں تمہارا؟

وہ پیچھے سے اسکی کمر سے پیٹ پہ بازو لے جاتے ہوئے اسکے شانے پہ اتنی تھوڑی رکھتے روبی کے کان میں کہنے لگا۔

روبی مشکل سے لیو کے سینے تک آتی تھی اسکا قد واقعی کچھ چھوٹا تھا۔

میرا قد چھوٹا نہیں ہے آپ ہی کچھ زیادہ لمبے ہیں۔

وہ دبے دبے غصے سے بولی۔

تم نا بہت چڑچڑی ہوگئی ہو اور کافی غصہ بھی کرنے لگی ہو۔ مجھے یاد ہے پہلے تم کافی محبت سے بات کرتی تھی اور غصہ تو کبھی کیا نی تھا تو پھر اب کیا ہوگیا آخر ایسا ہونہہ؟ یا پھر یہ خاص مہربانی صرف مجھ پہ کی جارہی ہے؟

وہ روبی کے پیٹ پہ اپنی بازوؤں کے حصار کو مضبوط بناتے اسکی گردن میں منہ دیے کہنے لگا۔

مجھے بھوک لگ رہی ہے۔ کیا کچھ کھانے کو نہیں ملے گا؟

وہ منہ بسورتے ہوئے کہنے لگی تو لیو مسکرانے لگا۔

سب سمجھ رہا ہوں میں مسز لیو۔

وہ روبی کا رخ اپنی طرف کرتے اسے اپنے حصار میں لیتے اسکے چہرے پہ جھکتے ہوئے کہہ رہا تھا۔ روبی کی سانسیں تیز ہونے لگی تھیں وہ نظریں جھکائے کھڑی کپکپارہی تھی۔

***********-***************

آج کی رات یخ بستہ ٹھنڈی برفانی تھی ۔۔۔ باہر روئی کے مانند آسمان سے گرتی برف سیاہ رات کو سفیدی میں لپیٹ چکی تھی ۔۔۔۔ ہر سو گہرا سناٹا چھایا ہوا تھا ۔۔۔رات کے بارہ بجھ رہے تھے۔۔۔۔ اسکی جان نے کچھ نہیں کھایا تھا تو وہ کیسے کچھ کھاتا اسی لیے وہ بھی بھوکا تھا۔

سوچتے سوچتے اسکی آنکھ کب لگی اسے پتا ناچلا ایک تو کتنے دنوں سے سویا نہیں تھا اوپر سے قریب اسکی جان سوئی ہوئی تھی ۔۔۔ جو اسکا سکون تھی تو کیسے نیند نہیں آتی ۔۔۔۔جب سکون قریب ہی تھا تو اندر کیسے بے سکونی ہوتی ۔۔۔۔۔

کل وہ جتنا غصہ میں تھا ۔۔۔ آج اسکے نسبت بے انتہا خوش تھا۔۔۔

کل وہ تھوڑا دور ہوئی تھی اور آج زندگی بھر کے لیے حاصل کرلیا تھا ۔۔۔

نینا کو جب ہوش آیا تو وہ تھوڑا کسمسائی اور اپنی موندی آنکھوں کو ہاتھ سے مسل کر نیند بھگانے لگی پھر خود کو روئی جیسے نرم گرم بستر پر پاکے مسکرائی ۔۔۔۔ اسکا دماغ ابھی بیدار نہیں ہوا تھا ۔۔۔ تبھی وہ خود کو شاید اپنے کمرے میں تصور کر رہی تھی ۔۔۔

آہستہ سے خود پے پڑا کمبل ہٹا کر وہ اٹھ بیٹھی تو اسکے بال سنان کے چہرے سے سرکتے کمر پر بکھرے ۔۔۔۔ پھر ایک بھرپور انگڑائی لی اور منہ پر ہاتھ پھیرا ۔۔۔۔

کمرے میں اندھیرا دیکھ وہ مسکرائی ۔۔۔۔ دماغ ابھی بوجھل سا تھا ۔۔۔۔ لل۔۔۔لگتا ہے ا۔۔ابھی رات ہے ۔۔ وہ بڑبڑاتی ہوئی واپس بیڈ پر گرنے کے انداز میں لیٹ گئی ۔۔۔۔ مزا ہی اتنا دے رہا تھا بیڈ ۔۔۔۔ اچانک اسکے ناک کے نتھنوں سے وہی اسکے دماغ میں رچی خوشبو ٹکرائی ۔۔۔۔ وہ مسکرادی ۔۔۔۔ اسے لگا اسکی شرٹ سے خوشبو آرہی ہے ۔۔۔۔

اسنے آنکھیں بند کرتے بائیں جانب جہاں سے خوشبو آرہی تھی کروٹ بدلی سنان کی طرف ۔۔۔اور اپنے ناک سے مزید قریب ہوتی خوشبو اپنے اندر اتارنے لگی تھی کہ اچانک لگا جیسے کمرے کی لائٹ روشن ہوئی ہے ۔۔۔۔

اور اس اچانک لائٹ جلنے سے اسکے سارے حواس لوٹ چکے تھے ۔۔۔خوشبو کا سحر جیسے ٹوٹ چکا تھا ۔۔۔۔۔

ڈرتے ڈرتے آنکھیں تھوڑی سی کھولی جیسے صرف پلکوں کو حرکت دی ۔۔۔۔ مسکراہٹ لبوں سے غائب ہوچکی تھی ۔۔۔۔۔ دماغ میں خطرے کی گھنٹیاں سی بجنے لگی۔۔۔۔

اسے لگا تھا لائٹ کا جلنا صرف اسکا وہم ہوگا ۔۔۔پر نہیں کالی گھنی پلکوں میں چھپی جب سرمئی آنکھوں سے روشنی ٹکرائی تو وہ بدحواس سی ہوگئی ۔۔۔۔ایکدم اسنے پوری آنکھیں کھول دی ۔۔۔۔سامنے پڑے وجود کو دیکھ لمحے میں اسکا بدن ٹھنڈا پر گیا آنکھیں پتھرا سی گئی ۔۔۔۔ گلابی رنگت میں زردی گھلنے لگی ۔۔۔۔ بیڈ پر پڑے پڑے وہ کانپنے لگی ۔۔۔ ہاتھ پائوں کی لرزش اور تیز ہوگئی ۔۔۔۔

اسنے سوئے ہوئے سنان سے اپنی خوفزدہ آنکھیں ہٹا کر کمرے پر ڈالی یہ دیکھ وہ اوسان باختہ ہوگئی ۔۔۔۔ پنک جالیدار پردوں کے بیچ وہ بڑے سے روئی جیسے نرم بیڈ پر پڑی تھی ۔۔۔۔ یہ تو کمرا نا اسکا تھا نا ہی گھر میں کسی کا ۔۔۔۔۔

کک۔۔۔کیا مم۔۔۔مجھے کڈنیپ کیا ہے ۔۔۔۔ وہ بڑبڑاتی ۔۔۔۔ نن۔۔۔نہیں یہ خخ۔۔خواب ہے ۔۔۔ ابھی ٹوٹ ج۔۔جائے گا ۔۔۔۔ وہ پسینے میں نم اپنے وجود کو حرکت دیتی اٹھ بیٹھی اور اس خوفناک خواب کو توڑنے کے لیے اپنا ہاتھ آگے بڑھایا ۔۔۔۔ بغیر شرٹ کے اسکا کسرتی وجود نمایا تھا ۔۔۔۔ سانسیں لینے سے اسکا سفید سینہ اوپر نیچے ہورہا تھا ۔۔۔ نینا کی بند ہوتی سانسوں کی طرح ۔۔۔۔

دو آنسوں پلکوں کا بار توڑ کر گلابی گالوں پر بہہ نکلے ۔۔۔۔ اسنے ڈرتے ڈرتے پیچھے کو کھسکتے جو خوشبو کے نشے میں بالکل پاس آگئی تھی ۔۔۔۔ اپنا کانپتا ہاتھ بڑھایا ۔۔۔۔ اسکی گھٹی سی ہچکی نکلی جب وہ خواب نا ٹوٹا ۔۔۔۔ وہ حقیقت میں تھا ۔۔۔۔ اور وہ واپس اسکے قید میں ۔۔۔۔۔

ڈیڈ۔۔۔۔۔۔ وہ ایکدم چیختی بیڈ سے نیچے گری ۔۔۔۔اور تیز چیخنے لگی ۔۔۔۔ مم۔۔مجھے ڈیڈ کک۔۔کے پاس جانا ہے ۔۔۔۔ وہ کہتی خود کو بیڈ کے الجھے پردے سے آزاد کراتی روتی سسکتی لرزتی ٹانگوں سے دروازے کی سمیت بھاگی ۔۔۔۔

جب سنان کی بھوری سرد سی مسکراتی آنکھیں کھلی ۔۔۔۔ وہ تو اسکے کسمسانے پر ہی اٹھ گیا تھا ۔۔۔۔ اور اسکی ہر حرکت کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔ اسکا قریب آنا اور حواس بحال ہونے پر پیچھے جانا۔۔۔۔۔ اسکا خواب سمجھ کر چھونا ۔۔۔۔۔

شاید مجھے کچھ کہنے کی ضرورت نہیں ۔۔۔۔ اسکی حالت پر مسکراتا بٹن دبایا تو بیڈ سے پردے اوپر ہوگئے اور اسکی چھت کی شکل اختیار کرگئے ۔۔۔۔۔ اسنے کہنی تکیے پر رکھ کر اسکے ہاتھ پر اپنا سر رکھا اور کروٹ اسکے طرف بدلی ۔۔۔۔۔ اب وہ سکون سے اسکی ساری کارکردگی دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔ بہت دلچسپی سے ۔۔۔۔کالے لمبے بال بکھرے کمر پر پڑے لہرا رہے تھے ۔۔۔۔ بغیر دوپٹے کے اسکی طرف پشت کیے دونوں ہاتھوں سے دروازہ پیٹ رہی تھی ۔۔۔۔

جہاں وہ اپنی پوری کوشش لگاتی لاک دروازے کو کھولنے کی کوشش کرتی روتے ہوئے ڈیڈ کو پکار رہی تھی ۔۔۔۔

ڈیڈ ۔۔۔پلیز مجھے بب۔۔۔بچالیں ۔۔۔۔ وہ ۔۔۔ وہ مجھے مارے گا ۔۔۔۔ پلیز۔۔۔بڑے ب۔۔بھیا ۔۔۔۔ ایک ایک کرکے سب کو مدد کے لیے بلانے لگی پر کوئی ہوتا تو آتا ۔۔۔۔۔

کوئی ہے؟۔۔۔ تھک کر وہ پکارنے لگی ۔۔۔پر اس بار بھی کوئی نا آیا ۔۔۔۔ تو روتے ہوئے دروازے پر اپنا سر ٹکا گئی ۔۔۔۔

اسکا بدن ہچکیوں کی زد میں تھا ۔۔۔۔

اا۔۔اب وہ مجھے نہیں چھوڑے گا ۔۔۔پھر سے مم۔۔۔مارے گا اور ۔۔کوئی نہیں بچائے گا ۔۔۔۔ میں چھپ سکتی ہ۔۔ہوں ۔۔۔ہاں میں اسکے اا۔۔۔اٹھنے سے پہلے چھپ جائونگی ۔۔۔۔۔ اچانک روتے ہوئے اسکے دماغ میں چھپنے کا خیال آیا ۔۔۔۔ جس پر اسنے فوراً عمل کرنے کا سوچا ۔۔۔۔ شاید اس سے وہ بچ جائے ۔۔۔۔ اا۔۔۔اور پھر صبح ہوتے ہی میں بھاگ ۔۔۔جائونگی واپس ۔۔۔۔ڈیڈ کے پاس ۔۔۔پھ۔۔۔پھر سب کو بتائونگی ۔۔۔۔ وہ خوف سے اتنا تیز بڑبڑا رہی تھی کہ سنان واضح سن رہا تھا ۔۔۔۔۔

اسکے واپس بھاگنے کی بات پر اسکا دماغ گھوما ۔۔۔۔ جو اتنی دیر چپ چاپ دیکھ رہا تھا سارا غصہ واپس دلا گئی ۔۔۔۔ تم ایسے نہیں سدھرنے والی ۔۔۔۔ وہ اٹھا اور جو آہستہ آہستہ بغیر اسکی طرف دیکھے دیوار سے چپکتی ڈریسنگ روم کی طرف جارہی تھی ۔۔۔۔

رکو ۔۔۔۔ اچانک اسکی دھاڑ پر کانوں کو ہاتھ رکھتی چیختی ۔۔۔اور ہاتھ پیر کسی پاگل کی طرح مارتی دیوار سے جا لگی ۔۔۔۔۔ مسلسل زور زور سے نا نا کرنے لگی ۔۔۔۔ آنکھیں میچے ۔۔۔۔۔

بغیر دوپٹے کے اسکا وجود پورا پسینے سے بھیگا تھا ۔۔۔۔ چہرا سرخ آنسوں سے تر تھا ۔۔۔۔۔

جب سنان اسکے سر پر پہنچ کر بالوں کو مٹھی میں جکڑا ۔۔۔۔۔وہ کراہ کر چیخی ۔۔۔آہہہہ ۔۔۔۔جب اسکا چہرا بالوں سے پکڑ کر اسنے اوپر کیا ۔۔۔۔

بتائو کیوں گئی تھی وہاں سے ؟؟ ۔۔۔ وہ بھوری سرخ آنکھوں سے اسکے مٹھی میں جکڑے بالوں کو جھٹکا دے کر منہ پر دھاڑا ۔۔۔۔۔

وہ اپنے بالوں کو ہاتھوں سے آزاد کرانے کی کوشش کرتی ۔۔۔۔ زور سے چیخی ۔۔۔۔ جائونگی پھر جائونگی ۔۔۔۔ پتا نہیں یہ لفظ کیسے اسکے منہ پر آگئے پر ایکدم چپ کرتے کسی خوفزدہ سہمے بچے کی طرح لرزتی آنسوں بہاتی اسکی شولا ٹپکاتی آنکھوں میں اپنی ناچتی موت کو دیکھنے لگی ۔۔

کیوں ۔۔۔۔ اسکے بالوں کو چھوڑ کر گلے سے پکڑا اور اسے دیوار سے لگائے منہ پر غرایا ۔۔۔۔۔ نینا کی آنکھیں جو پہلے سے ہی پھٹی ہوئی تھی اسکے گلے سے پکڑنے پر سرخ ہوگئی اور منہ سے خوفناک چیخ نکلی اسے لگا وہ اسے اب مار دیگا ۔۔۔

اسکی وحشت سے اسکا سارا بدن خود کا بوجھ اٹھانے سے انکاری ہوگیا ۔۔مسلسل لرزش سے ہاتھ پائوں ٹھنڈے ہوتے سن ہوگئے ۔۔۔ اسے ایسا محسوس ہوا جیسے جسم کا کوئی حصہ نہیں تھا ۔۔۔دل کی دھڑکنوں کا شور اتنا تیز تھا کہ اسے لگا سارے کمرے میں گونج رہی ہیں ۔۔۔ ۔۔۔

گردن پر سنان کی پکڑ سخت نا ہونے کی وجہ سے وہ کسی درخت کی کٹی ہوئی ٹہنی کی طرح جھول کر اسکے بازوں میں گری ۔۔۔۔

سنان بوکھلا گیا اسکے ٹھنڈے یخ بدن کو اچانک لڑکھ کر گرنے پر اپنے بازوں میں سیدھا کیا تو موندیں آنکھوں سے آنسوں بہاتی بڑبڑا رہی تھی ۔۔۔۔۔ ننن۔۔۔نہیں جائونگی۔۔۔۔۔ کک۔۔۔ک۔کبھی ن۔نہیں جائونگی ۔۔۔۔

ہڑبڑا کر اسے اپنے بازوں میں اٹھائے بیڈ پر ڈالا ۔۔۔۔ اور خود قریب بیٹھ کر اسکے نم بےہوش وجود کو ہلانے لگا ۔۔۔۔۔ نینا۔۔۔نینا میری جان کیا ہوا ۔۔۔۔ وہ اس پر جھک کر اسے چہرے پر ہاتھ پھیر کر بولا ۔۔۔۔اسکی خود کی سانسیں جیسے تھم رہی تھی ۔۔۔۔

اففف یہ کیا ہوگیا مجھ سے ۔۔۔۔۔ آئی ایم سوری نینا۔۔۔۔ سو سوری ۔۔۔۔ اسکے دونوں یخ بستہ ٹھنڈے ہاتھوں کو اپنے گرم ہاتھوں میں لیکر انہیں رگڑنے لگا ۔۔پھر پائوں کو رگڑا۔۔۔۔۔ وہ پہلی بار بے انتہائی شرمندگی محسوس کر رہا تھا ۔۔۔۔ جب وہ بڑبڑائی ۔۔۔۔۔ مم۔۔۔میری سانسیں ۔۔۔۔ شاید اسکی سانسیں سینے میں اٹک رہی تھیں ۔۔۔۔۔

ک۔۔کیا ہوا سانسیوں کو ۔۔۔۔

جھٹکے سے اسے اپنے سینے سے لگائے ۔۔۔۔ گھبراہٹ سے پوچھا ۔۔۔

مجھے معاف کردو ۔۔۔۔۔

وہ لمبی لمبی سانسیں لینے لگی ۔۔۔۔ اسکی سانسیں بند ہونے کو ہوئی ۔۔۔۔۔

وہ خوف سے رونے لگی ۔۔۔۔۔ مم۔۔۔میری سس۔۔سانسیں نن۔۔۔نہ۔۔ وہ مزید بول نا پائی ۔۔۔اور اسکی باہوں میں گہرے سانس لینے لگی ۔۔۔۔

رات کے بارہ بجے اسکی اچانک بگڑتی حالت اسے پاگل بنا رہی تھی ۔۔۔ دل کر رہا تھا خود کو فنا کردے ۔۔۔۔ اسکی مدہم بڑبڑاہٹ پر اسے بیڈ پر لیٹایا اور دونوں ٹھنڈے ہاتھوں کو اپنے گرم ہاتھوں میں لیے ۔۔۔۔

بغیر وقت لیے ایک گہرا سانس بھر کر اسے مصنوعی سانس دینے کے لیے اس پر جھکا ۔۔۔۔۔

ابھی کچھ دیر ہی ہوئی تھی جب نینا نے اپنی بڑی آنکھیں پوری کھولی ۔۔۔۔۔ سنان کو خود پر جھکا دیکھ اور اسکی سانسوں کو خود میں اترتی محسوس کرتی وہ خوف سے بوکھلائی ۔۔۔۔

پھر جھٹکے سے اپنا منہ موڑ کر لمبے لمبے سانس لینے لگی ۔۔۔۔ سنان نے جب ایساکرتے دیکھا تو خوش کی ایک لہر اسکے تن بدن میں دوری ۔۔۔۔

وہ ویسے ہی دونوں ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیے اس پر جھکا ہوا اسکے سرخ چہرے کو دیکھ رہاتھا ۔۔۔۔۔۔۔ سوری جان۔۔ آئی ایم سو سوری ۔۔۔۔ غلطی ہوگئی آئندا کبھی اپنی جان پر غصہ نہیں کرونگا ۔۔۔۔۔ اپنی سانسیں اسکی رخسار پر چھوڑتا ندامت کی گہرایوں سے بولا ۔۔۔۔۔

نینا غصے سے اپنے ہاتھ چھڑوانے لگی ۔۔۔۔ ہچکیاں لیتے ۔۔۔۔۔ جھ۔۔۔۔جھوٹ بولتے ۔۔۔۔ ہو بالکل جج۔۔جھوٹ بولتے ہو ۔۔۔۔۔ بار بار غصہ ک۔۔کرتے ہو ۔۔۔ بار بار ۔۔۔۔۔وہ چیخی۔۔۔

ہاتھوں سے اپنے ہاتھ نکال کر جو شاید سنان نے چھوڑ دیے ۔۔۔۔۔ بغیر شرٹ کے کسرتی وجود سمیت اس پر جھکے اسکے چوڑے شانوں سے پکڑ کر دور کرتی پیروں کی مدد سے اوپر کھسکی ۔۔۔۔ اور واپس روتے ہوئے بیڈ سے اتری ۔۔۔۔۔ شاید زندگی میں پہلی بار اسے اتنا غصہ آیا تھا سنان پہ کہ دل کر رہا تھا پتھروں سے مارے ۔۔۔۔۔

کچھ دیر پہلے اسے لگا تھا وہ اب نہیں بچے گی ۔۔۔ اسنے اسے مار ہی تو دیا تھا ۔۔۔۔۔ پر نہیں وہ مرنے بھی نہیں دے رہا تھا ۔۔۔۔۔

کانپتی ٹانگوں لیے روتے واپس دروازے کی سمیت گئی ۔۔۔۔۔ اور پھر سے اسے پیٹنے لگی ۔۔۔۔۔ سنان ایک گہرا سانس لیے مڑا ۔۔۔۔ وہ اسکی معافی کو نظرانداز کرگئی تھی اور اب بھی جانے کی واپس ضد کرنے لگی تھی ۔۔۔۔۔

بہت ضدی ہو ۔۔۔۔۔ بڑبڑاتا ہوا بیڈ سے اترا اور اسکی طرف قدم اٹھائے ۔۔۔۔ نینا قدموں کی چاپ سنتی مڑی ۔۔۔۔۔ اور سنان کو اپنی طرف آتے دیکھ ۔۔۔۔۔ واپس چیختے ہاتھ پیر مارنے لگی ۔۔۔۔

نن۔۔۔نہیں رہنا مم۔۔مجھے یہاں ۔۔۔۔۔ وہ زور سے دھاڑی ۔۔۔۔۔ جس پر وہ مسکرادیا ۔۔۔۔۔ اور ؟؟ پوچھتا ایک ہاتھ سے ۔۔ دونوں ہاتھوں سے خونخوار شیرنی بنی اس پر جھپٹی اسکے دونوں ہاتھ پکڑے اور دوسرا اسکی کمر میں ڈالکر اسے اپنے کندھے پر ڈالا ۔۔۔۔

لگتا ہے دماغ نے کام کرنا چھوڑ دیا ہے بےبی۔۔۔۔۔۔کہتا آگے اسکی لاتوں پیچھے اسکی مکوں کی پروہ کیے بغیر بیڈ کی طرف اسکی سائیڈ پر آیا اور اسے بیڈ پر ڈالا جو اسے مارنے کو جھپٹنے لگی تھی ۔۔۔۔

پورے بال بکھر گئے تھے پسینے سے بھیگی ۔۔۔۔ سرخ سرمئی آنکھوں میں غصہ لیے اسے آج شاید مارنا چاہتی تھی ۔۔۔۔

اففف اتنا غصہ خونخوار شیرنی ۔۔۔۔ہاہاہاہا۔۔۔

سنان اسکی حالت پر قہقہہ لگا کر ایک ہاتھ سے اسکے ہاتھ اور دوسرے سے پائوں پکڑ لیے ۔۔۔۔ جس وجہ سے وہ کوئی حرکت نہیں دے پارہی تھی اپنے ہاتھوں اور پاؤں کو ۔۔۔۔۔جب ایسا نا کر سکی تو اپنے وجود کو جھٹکے دیتی رونے لگی ۔۔۔۔۔

پپ۔۔۔۔پلیز چھوڑ دو ۔۔۔ کافی کوشش کے بعد جب خود کو آزاد نا کرواسکی تو تھک کر سسکتے بولی ۔۔۔۔

اور سنان کو بھی شاید اس پر رحم آگیا تھا تبھی اسے آزاد کر دیا ۔۔۔۔ ویسے بھی اب وہ خاموش لگ رہی تھی ۔۔۔۔

بیڈ پر پڑا اسکا نازک وجود مسلسل ہچکیوں کے زد میں تھا ۔۔۔۔ ابھی وہ ہاتھ چھوڑ کر دور ہونے ہی والا تھا کہ وہ اٹھ کر اسکے شانوں پر جھپٹی ۔۔۔۔ اور اپنے دانت اسکے کندھے پر گاڑھ دیے ۔۔۔۔

وہ اسکے حملے کے لیے تیار نہیں تھا اس لیے خود کو بچا نا سکا ۔۔۔ اسکے ناخون اپنی گردن اور دانتوں کا تیز دبائو محسوس کرتا لب بھینچ کر رہ گیا ۔۔۔اور وہ کسی چڑیلوں کی طرح اس پر چمٹی ہوئی تھی اور تیز سے اسے کاٹنے لگی اسکے سوائے کر بھی کیا سکتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

اور سنان نے بھی کوئی چھڑوانے کی مزاحمت نہیں کی ۔۔۔۔۔ الٹا اسکی کمر کے گرد دونوں ہاتھ باندھ کر اسے اور خود میں بھینچ لیا ۔۔۔۔۔یہ تو بچوں والی سزا تھی اسکے لیے ۔۔۔۔ تبھی بھرپور انداز میں مسکراتا اسکے بالوں میں منہ چھپائے اسکی گردن کو لبوں سے چھونے لگا۔۔۔۔۔۔ اسکا چہرا تیز کاٹنے سے سرخ ہورہا تھا ۔۔۔۔۔۔

اسکی حرکت پر نینا کو جیسے کرنٹ سا لگا ۔۔۔ وہ بدک کر اس سے پیچھے ہونے لگی ۔۔۔۔ پر ایسا نا ہوسکا سنان کے حصار کی وجہ سے ۔۔۔۔

اسنے اسکے کندھے پر اپنے دانت اتنے تیز گاڑھے تھے کہ وہاں سے خون کی بوندیں نکل رہی تھی ۔۔۔۔ گردن پر بھی ناخونوں سے وار کرکے خون نکال دیا تھا ۔۔۔۔۔ اسے لگا وہ چیخے گا اسکی طرح روئے گا پر یہ تو اسکی سوچ کے بالکل الٹ ہوگیا تھا ۔۔۔۔۔

سنان کی آنکھوں میں خمار سا پھیلنے لگا ۔۔۔۔۔ اسکی خوشبو پر ۔۔۔ نینا دیکھتے اسکی آنکھوں میں غصے کی جگہ پھر سے خوفزدہ ہوگئی تھی ۔۔۔۔

ممم۔۔۔مجھے چھ۔۔۔چھوڑو ۔۔۔۔۔ آواز بھی مشکل سے نکلی اسکی حلق سے ۔۔۔۔۔ اور ہراساں ہوتی خشک ہونٹوں پر زبان پھیری ۔۔۔۔

اچانک مار مارنے کی جگہ کمرے کا سارا ماحول بدل گیا ۔۔۔۔ جو نینا کی ریڑھ کی ہڈی میں سرسراہٹ پھیلانے لگا ۔۔۔۔۔

سنان کی بھوری آنکھیں اسکی سرمئی خوفزدہ آنکھوں سے ہوتی پھڑ پھڑاتے ہونٹوں پر آئی ۔۔۔۔۔ نینا کو اب حقیقت میں اپنی بےوقوفی کا احساس ہوا ۔۔۔۔۔

چھ۔۔۔چھوڑو ۔۔۔۔۔ اسکی نظروں سے گھبراتی روتے ہاتھوں میں چہرا چھپا گئی ۔۔۔۔۔

سنان کی تیز دھڑکنیں خود میں محسوس کرتی وہ اور تیز رونے لگی ۔۔۔۔ منہ ویسے ہی چھپا ہوا تھا ۔۔۔۔ بھاگنے مارنے کی باتیں دماغ سے کہیں غائب ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔ اور سنان چاہتا ہی کیا تھا ۔۔۔۔ اپنی بے ساختہ مسکراہٹ کو روکے آہستہ سے اسے بیڈ پر لیٹایا ۔۔۔۔ اس پر جھکنے کے انداز میں ۔۔۔۔۔۔

اسنے جیسے اسے بیڈ پر لیٹایا ۔۔۔۔ نینا اسکے ہاتھ جھٹکتی ۔۔۔۔ کمبل سر تک لےکر اندر گھس گئی ۔۔۔۔۔

سنان کا دل کررہا تھا زور زور سے قہقہے لگائے ۔۔۔۔۔ مسکراہٹ روکنے کے لیے اسنے اپنا نچلا لب دبا لیا ۔۔۔۔۔

ایک نظر کمبل کے اندر کانپتے اسکے وجود پر ڈالکر ڈریسنگ آئینے کے سامنے گیا مرر میں اپنے گردن اور کندھے کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔ اور مسکرا کر ہونٹوں کو وائو کی شیپ میں دیکر اسکے بدلے کو داد دی ۔۔۔۔۔

جہاں سے صرف گوشت کا ٹکرا ہی نکالنا باقی تھا ۔۔۔۔۔ وہ بھی نکال کر کھا جاتی ۔۔۔۔۔۔ بڑبڑاتا ۔۔۔۔ اسے صاف کرکے ۔۔۔۔آہستہ سے بغیر آواز کے دروازہ کھول کر باہر گیا ۔۔۔۔ اور کچھ ہی دیر میں ٹرے میں اسکے لیے کھانا لیکر آیا ۔۔۔۔۔۔ جسنے صبح سے کچھ نہیں کھایا تھا ۔۔۔۔

ٹرے سائیڈ ٹیبل پر رکھ کر اسکے پاس بیٹھا ۔۔۔۔۔ جس پر نینااور سمٹ سی گئی کمبل میں ۔۔۔۔۔

اٹھو میری شیرنی کھانا کھائو ۔۔۔۔۔ورنہ رات کو کوئی شک نہیں کہ میری گردن کو اپنی بھوک کا نشانہ بنائو ۔۔۔۔۔ اسکی مسکراتی آواز اور کھانے کا سن کر نینا نے تھوڑا سا کمبل منہ سے ہٹایا ۔۔۔۔۔ ایسا بھی نا کرتی اگر اسے شدید بھوک نا لگی ہوتی ۔۔۔۔۔

اور پھر سنان کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔ جو ٹرے اسکے سامنے رکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔

سنان کی نظر جب اسکی طرف اٹھی تو نینا نے جلدی سے واپس کمبل ڈال دیا ۔۔۔۔۔۔

وہ سمجھ گیا تھا بھوک تو لگی ہے پر اس سے ڈر رہی ہے ۔۔۔۔۔۔

چلو شاباش تم کھانا کھائو میں تب تک فریش ہوکر آتا ہوں ۔۔۔۔۔ کہتا اٹھ کر باتھ روم میں چلا گیا ۔۔۔۔۔ اسے کھانا سکون سے کھانے کے لیے چھوڑ کر ۔۔۔۔۔۔

نینا نے جب اسکی آواز سن کر باتھروم کا دروازہ کھلتے اور بند ہونے کی آواز سنی تو آہستہ سے پھر کمبل سے سر نکالا ۔۔۔۔۔۔۔ کہیں وہ جھوٹ تو نہیں بول رہا ۔۔۔۔۔۔ پر وہ وہاں سچ میں نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔

اسکے آنے سے پہلے ہی وہ جلدی سے اٹھی اور تیزی سے تھوڑا سا کھاکر جس سے بھوک کی شدت ختم ہوئی تو ٹرے ٹیبل پر رکھ کر واپس کمبل میں گھس گئی ۔۔۔۔۔۔

کھانا کھانے کے بعد جسم میں تھوڑی سی جان آئی اور کپکپاہٹ بھی تھوڑی سے کم ہوئی تھی ۔۔۔۔۔اور ٹانگوں میں بھی جان واپس لوٹ آئی ۔۔۔۔۔۔ تو وہ ریلیکس ہوکر آنکھیں موند گئی ۔۔۔۔۔۔

جیسے گہری نیند میں ہو ۔۔۔۔۔

سنان نائیٹ ریلیکس ڈریس میں باتھروم سے باہر نکلا ۔۔۔۔ ایک نظر نینا پر ڈالکر اپنے بالوں میں ہاتھ پھیرتا ہیٹر کا ٹمپریچر لو کرکے وہ واپس بیڈ پر آیا ۔۔۔۔۔ نینا شاید واپس سو چکی تھی ۔۔۔۔۔ یا سونے کا ناٹک کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

پر وہ بھی سنان تھا خوب سمجھ رہا تھا ۔۔۔۔۔ مسکراہٹ روکے خود پر کمبل ڈالے ہاتھ بڑاھ کر اسکی کمر سے پکر کر خود کے قریب کیا جس سے نینا کی پشت اسکے سینے سے لگی۔۔۔۔۔۔۔

نینا جو اپنے ساتھ اسکے ایک بیڈ پر سونے سے ہی شاک میں اور ڈری ہوئی تھی سنان کے ایسا کرنے پر شدید قسم کا جھٹکا سا لگا ۔۔۔۔۔۔آنکھیں حیرت سے پھٹ گئی تھی ۔۔۔۔

وہ بوکھلائی کچھ کرتی اس سے پہلے ہی اپنے کان میں سنان کی سرگوشی پڑی ۔۔۔۔۔

ششش ۔۔۔۔۔سوجائو بہت رات ہوگئی ہے ۔۔اور ہم بہت دور ہیں گھر سے ۔۔۔ چڑیلیں بھی موجود ہیں باہر اگر تمہیں جاگتے دیکھا تو اللہ ہی خیر ہے ۔۔۔۔۔۔باقی کی لڑائی صبح کے لیے رکھو ۔ ۔۔۔۔۔۔۔

اور ہاتھ اسکے گرد پھیلا کر اسے اپنے حصار میں لیے اپنے چوڑے سینے میں چھپائے آنکھیں موند گیا ۔۔۔۔۔۔ پر وہ بیچاری اسکی بھاری سرگوشی پر سانسیں روکے آنکھیں میچی بغیر کسی مزاحمت کے پڑی تھی ۔۔۔۔۔ اسکی چڑیل والی بات پر ٹانگوں میں واپس کپکپاہٹ شروع ہونے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔ پشت پر اسکی دھڑکنے محسوس کرتی ۔۔۔۔۔خوف سے انگلیاں دانتوں کے بیچ رکھ لی ۔۔۔۔اور ان پر اپنے دانتوں کا دبائو دینے لگی ۔۔۔۔۔۔ تکلیف سے آنکھوں میں آنسوں آگئے ۔۔۔۔۔

مزید تیز کپکپاہٹ ہوتی جب سنان کی بھاری ٹانگیں اسکی ٹانگوں کو چھپاگئی ۔۔۔۔۔۔۔اسنے آزاد کروانے کی کوشش کی پر کروا نا سکی ۔۔۔۔

پھر نا جانے کب میچی میچی آنکھوں میں نیند آئی اسے خود پتا نا لگا ۔۔۔۔۔۔

*************—

صبح سویرے اٹھتے وہ کسی کال کے آنے پہ باہر چلا گیا۔ جب واپس آیا تو کمرے کا دروازہ ہلکے سے کھولتے وہ کمرے میں داخل ہوا۔

وہ چلتا ہوا بیڈ کے قریب آیا ۔۔۔۔۔ جہاں وہ میٹھی نیند کے مزے لے رہی تھی ۔۔۔۔۔پھر آہستہ سے پاس بیٹھ کر اسے دیکھتے جھکا اور چہرے پر پھونک ماری ۔۔۔۔ جس سے نینا نے پلکوں میں جنبش دی ۔۔۔۔

اب اٹھ بھی جائو ۔۔۔۔۔ گال اسکی گال سے مس کرتے کان میں سرگوشی کی ۔۔۔۔ 15 گھنٹے سوئی ہو ۔۔۔۔۔۔ نینا اپنے نازک گال پر اسکی چھبتی شیو اور کان پر سانسیں محسوس کرتی ۔۔۔۔۔ ایکدم آنکھیں کھول گئی ۔۔۔۔۔۔

اور ہڑبڑا کر بولی ۔۔۔۔۔ یی۔۔۔۔یہ کیا کر رہے ہہ۔۔۔ہو ہٹو پپ۔۔۔پیچھے ۔۔۔۔۔سنان اسکی گھبرائی آواز سن کر مسکراتا دور ہوا ۔۔۔۔۔ اور پھر اسکی آنکھوں میں دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔۔جو نیند سے گلابی تھیں ۔۔۔۔۔

نینا اسکی بھوری آنکھوں کی تپش پر تکیے میں سمٹنے لگی ۔۔۔۔کہ

اچانک اسکی آنکھوں میں رات کا ہر لمحہ کسی فلم کی طرح چلنے لگا ۔۔۔۔۔۔ اسکا موڈ پھر سے بگڑنے لگا ۔۔۔۔۔

اور بے ساختہ اسکی نظر سنان کی گردن کے اردگرد گھومنے لگی ۔۔۔۔ پر شرٹ کی وجہ سے دیکھ نا سکی اور منہ بناکر چہرا موڑنے ہی والی تھی ۔۔۔۔۔ جب نظریں سفید کرتے پر سینے پر گئی۔۔۔۔۔

سنان اسکی نظریں سینے پر دیکھتا خود بھی اپنے سینے کو دیکھنے لگا۔

پھر اسے دیکھتے نینا کو دیکھا جو کنفیوز لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔

کچھ نہیں جان تمنے جو کاٹا تھا اسکے خون کے دھبے ہیں ۔۔۔۔۔وہ اسے خوفزدہ نہیں کرنا چاہتا تھا اپنا سینا دیکھائے ۔۔۔۔

خیر یہ چھوڑو یہ بتائو میرے ساتھ رہنا چاہتی ہو یا نہیں۔۔۔۔۔ اسکے دونوں ہاتھوں کی نازک انگلیوں کو اپنی انگلیوں میں پھنسائے تکیے سے لگائیں ۔۔۔۔

نینا ایسا کرنے پر بوکھلا سی گئی ۔۔۔۔۔ اور چہرے پر گھبراہٹ کے آثار نمایاں ہونے لگے ۔۔۔۔

پر واپس چلنے کا سنکر حیرت سے دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔

پپ۔۔۔پاگل ہیں آآ۔۔۔آپ پہلے کہتے ہیں نہیں جج۔۔۔جائیں گے ۔۔۔پھ۔۔پھر کہتے ہیں چلے گے ۔۔۔۔۔ وہ اپنی انگلیوں کو آزاد کروانے کی کوشش کرتی غصے سے بولی ۔۔۔۔۔۔ اسکی ناک سرخ ہوگئی ۔۔۔۔۔

سنان صبح صبح اسکا یہ روپ دیکھ کر پہلے تو حیران ہوا پھر ہنس دیا ۔۔۔۔۔۔

اففف ۔۔۔۔ اتنی غصے والی ہورہی ہو ۔۔۔ہنی میرے بچوں کا کیا بنے گا ۔۔۔۔۔ وہ تو تم سے خوفزدہ رہیں گے ۔۔۔۔۔۔ وہ کچھ فکرمندی اور شرارت سے اسکی سرخ چھوٹی سی ناک کو اپنی ناک سے مس کرتے بولا ۔۔۔۔۔

نینا کو تو حیرت کا جھٹکا سا لگا ۔۔۔۔۔۔۔ بچوں کا لفظ سنکر ۔۔۔۔۔

کک۔۔۔کہاں ہہ۔۔۔ہیں آپکے بچے ؟؟۔۔۔۔۔ وہ واپس جانے کا بھول کر اسے گھور کر پوچھنے لگی ۔۔۔۔۔

سنان نے پہلے اسکے پھٹی حیران آنکھوں میں دیکھا پھر جھک کر کان میں بولا ۔۔۔۔۔۔

ابھی ہیں تو نہیں پر انشااللہ وہ وقت دور نہیں جب میری 3بیٹیاں اور 3بیٹے ہوں گے ۔۔۔۔۔۔ بیٹیاں سب میری ہنی جیسی ہونگی اور بیٹے میرے جیسے۔۔۔۔۔۔ وہ کان میں سرگوشی کرتے اس پر اپنے لب رکھ لیے ۔۔۔۔۔۔

اتنے بچے ۔۔۔۔۔۔۔۔ آآپکے ۔۔۔۔۔۔ وہ اسے پیچھے کرتی معصومیت اور حیریت سے چیخی ۔۔۔۔۔۔

سنان اسکی حالت پر قہقہہ لگا اٹھا ۔۔۔۔۔

کیوں کم ہیں ۔۔۔۔۔۔ شرارت سے پوچھتا اسے اپنے حصار میں لیکر بیڈ پر لیٹ گیا ۔۔۔۔۔۔

نن۔۔۔۔نہیں بب۔۔۔بہت زیادہ ہیں ۔۔۔۔ اتنے تو کسی کے نن۔۔۔نہیں ہہوتے آآ۔۔۔آپکے کیسے ہونگے ۔۔۔۔۔۔اسکے حصار کو توڑنے کی کرتی حیریت سے بولی ۔۔۔۔۔

صرف میرے نہیں تمہارے بھی ہونگے ۔۔۔۔مطلب ہمارے ۔۔۔۔۔

نن۔۔۔نہیں میرے نن۔۔نہیں ہونگے ۔۔۔صرف آآ۔۔آپکے ہونگے ۔۔۔۔۔ وہ خود کا سوچ کر جلدی سے بولی ۔۔۔۔۔

یہ تو وقت بتائے گا کہ کس کے ہونگے ۔۔۔۔۔۔ پر ابھی یہ بتائو کیا چلنا ہے واپس ۔۔۔۔؟وہ اسکی رونے جیسے صورت کو دیکھ مسکراہٹ دبا کر بات گھما گیا ۔۔۔۔۔ اور اسکی حصار توڑتی مزاحمت کو نظرانداز کرتا پھر سے پوچھنے لگا ۔۔۔۔۔۔

آآآ۔۔۔۔آپ لے جائیں گے ۔۔۔۔۔؟وہ الٹا کچھ التجا اور کچھ بے یقینی سے پوچھنے لگی ۔۔۔۔۔۔

ہاں لیجائونگا اگر تمنے میری بات مانی تو ؟۔۔۔۔۔ وہ انگوٹھا اسکے کان پر پھیرتا کچھ گھمبیر آواز میں بولا ۔۔۔۔

نینا کی جو اسکی ہاں پر آنکھیں چمکی تھی پر اسکی آواز اور حرکت گھبرا گئی ۔۔۔۔۔ اور ہڑبڑا کر چہرا جھٹکنے لگی ۔۔۔۔۔۔

کک۔۔۔۔کونسی بات ۔۔۔؟ وہ آنکھیں میچے اسکے انگلیوں کو گردن پر پھیرنے سے سانسں روک کر خشک حلق سے بولی ۔۔۔۔۔

اگر تم مجھے کس کروگی تو میں تمہیں لے جائونگا سب کے پاس ۔۔۔۔۔۔ اور زیادہ تنگ بھی نہیں کرونگا ۔۔۔۔۔۔ وہ دونوں ہاتھوں سے گرفت کچھ مضبوط کرکے بولا ۔۔۔۔۔۔

نن۔۔۔نننہیں ۔۔۔۔۔ مم۔۔میں ایسا ن۔۔نہیں کرونگی ۔۔۔۔۔ وہ ایکدم اسکی بات پر آنکھیں پھاڑے بولی ۔۔۔۔۔۔

اوکے کوئی بات نہیں ۔۔۔۔۔ پھر یہیں ہیں ۔۔ہمیشہ کے لیے میں اور تم ۔۔۔۔ ہم دونوں ایک ساتھ پوری زندگی یہیں گذاریں گے اکیلے اکیلے چھے بچوں کے ساتھ ۔۔اور تم کبھی اپنے بھائی اور باپ کو دیکھ بھی نہیں سکوگی ۔۔۔۔۔ وہ اسکا انکار سن کر اسے ایسے ہی ڈرانے لگا ۔۔۔۔ اور وہ سچ میں آنکھوں میں آنسو لا کر بولی ۔۔۔۔

کک۔۔۔کیا کک۔۔کچھ اور ۔۔۔۔ مم۔۔میرا مطلب یییہ۔۔۔یہ ننہیں ۔۔۔۔۔ وہ ڈرتی اسکی باتوں پر دکھ سے بولی ۔۔۔۔۔ اسکی جان اٹک گئی جب وہ ہمیشہ کے لیے بولا ۔۔۔۔۔

نہیں کرنا تو یہی ہے ۔۔۔ اب آگے تم جانو یا تمہارا مسئلہ ۔۔۔۔۔ وہ بھی ضدی ہوکر بولا ۔۔۔۔۔

آآ۔۔۔آپ بہہت برے ہہ۔۔ہیں۔۔۔ وہ آنسوں صاف کرتی بولی ۔۔۔۔۔

ہاں میری جان کہتی ہے ۔۔۔۔۔

تو کیا کہتی ہو ۔۔۔۔۔ ؟ جلدی بتائو پھر چلنا بھی ہے ۔۔۔۔۔ وہ بے صبر ہوا ۔۔۔۔۔۔

پپلل۔۔۔ اسکے لفظ ابھی نکلے نہیں تھے جب وہ پہلے بولا ۔۔۔۔۔ صرف جواب ۔۔۔۔۔

نینا ایک بے بس نظر اس پر ڈالی جو منتظر تھا جواب کے ۔۔۔۔۔

آآ۔۔آنکھیں ۔۔۔۔۔۔ اسنے ہار مانتے ہوئے اسکی آنکھوں کی طرف اشارہ کیا ۔۔۔۔ سنان نے پہلے تو بے یقینی سے دیکھا ۔۔۔۔۔ پھر ایکدم خوش ہوتے آنکھیں بند کرلیں ۔۔۔۔۔

نینا اسکا حصار توڑ کر اٹھ بیٹھی ۔۔۔۔۔ جس پر سنان نے آنکھیں کھول دی ۔۔۔۔۔۔

پر اسے قریب بیٹھا دیکھ پھر سے مسکرادیا ۔۔۔۔۔

آآآ۔۔۔۔آپ جھوٹ تو نن۔۔نہیں بول رر۔۔۔رہے نا ۔۔۔۔؟پپ۔۔پہلے پرامس کریں لل۔ ۔لیکے جائیں گے ۔۔۔۔ وہ کچھ خوفزدہ سی کانپتے ہاتھ آگے کرتے وعدہ لینے لگی ۔۔۔۔۔

اتنا بھی یقین نہیں مجھ پر ۔۔۔۔۔ وہ کچھ بد مزہ سا ہوتا اسکے ہاتھ پر اپنا ہاتھ رکھ کر پرامس دینے لگا ۔۔۔۔۔۔

اور پھر نینا نے لرزش کرتے اپنا ہاتھ کو کپکپاکر اسکی آنکھوں پر رکھا ۔۔۔۔۔ سانسیں جیسے کوئی جسم سے چھین رہا تھا ۔۔۔۔ بے جان ہاتھ اسکی آنکھوں پر رکھ کر خود بھی آنکھیں بند کیے اس پر جھکی ۔۔۔۔۔۔

اور اسکی گال پر آہستہ سے اپنے پھڑ پھڑاتے ہونٹ رکھے ۔۔۔۔۔ اور جلدی سے پیچھے ہوئی جیسے وہ کوئی بھوت ہو ۔۔۔۔۔ ماتھے پر پیسنے اور ہاتھوں کی ہتھیلیاں بھی بھیگ گئی تھی ۔۔۔۔۔ جب وہ اسکا کانپتا ہاتھ آنکھوں سے ہٹا کر بولا ۔۔۔۔

یہ کیا تھا ۔۔۔۔۔ اسکی آواز میں حیریت اور بے یقینی تھی ۔۔۔۔۔۔

نینا دھڑکتے دل اور شرم سے سرخ جھکے چہرے سے خشک اٹکتی آواز میں بولی ۔۔۔۔

کک۔ ۔۔کس ۔۔۔۔ سنان صدمے میں اسکے چہرے کے رنگ اور لبوں پر مسکان بھی محسوس نا کرپایا ۔۔۔۔۔۔

اگر یہ تمہاری کس تھی تو بیٹھی رہو یہاں ۔۔۔۔ وہ منہ بنا کر خفگی سے بولا ۔۔۔۔۔ نینا کو جیسے جھٹکا لگا ۔۔۔۔۔

پپ۔ ۔پر آپنے پرامس ۔۔۔۔۔ وہ بھرائی آواز میں اسے یاد ڈلانے لگی ۔۔۔۔

ہاں یاد ہے پرامس پر تم بھی کس کرو نا کہ بچوں کی طرح میرے گال چومو۔ ۔۔۔۔

وہ اٹھ کر بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔ نینا جو اتنے میں ہی مر رہی تھی اسکی بات پر سمجھتی ۔۔۔۔۔۔

نن۔ ۔نہیں ۔۔۔۔کرتی نفی میں سرہلانے لگی ۔۔۔۔

ٹھیک ہے مجھے کیا ۔۔۔ اٹھو فریش ہوجائو ۔۔۔۔ وہ پھر چالاکی سے بےفکری میں بولا ۔۔۔۔۔جیسے کہہ رہا ہو اس میں فائدہ تمہارا ہے مجھے کیا ۔۔۔۔۔

وہ اٹھ کر جانے لگا جب پیچھے سے مجبور ہوکر نینا نے اسکی انگلیاں پکڑ لی ۔۔۔۔۔

وہ مسکراتا بغیر مڑے بولا ۔۔۔۔۔

بولو ۔۔۔؟ جب مدہم سی کانپتی آواز اسکے کان میں پڑی ۔۔۔۔۔ آئو ۔۔۔۔۔

وہ بھی پھر خاموشی سے احسان کرنے والے انداز میں واپس بیٹھا ۔۔۔۔ اور اسے اپنی لپس کی جانب اشارہ کیا ۔۔۔۔۔ نینا سرخ چہرے سے سر جھکا گئی ۔۔۔۔آنکھیں ۔۔۔۔؟پھر بولی۔ ۔۔۔

کرلیں ۔۔۔۔۔ اسنے آدھی آنکھیں بند کی ۔۔۔۔

نینا نے ڈرتے ڈرتے سر اٹھایا ۔۔۔۔۔ اور شرمائی سی مسکان ہونٹوں میں دبائے اسکی جانب کھسکی ۔۔۔۔۔ سنان پلکوں کی لکیروں سے اسے دیکھ کر خود بھی مسکراہٹ کا گلا گھونٹ گیا ۔۔۔۔۔

وہ قریب ہوکر شانوں سے اسکی شرٹ اپنی کانپتے لرزتی مٹھیوں میں پکڑ کر آنکھیں بند کرگئی ۔۔۔۔۔۔

اور وہ سرشار ساہوکر ایک ہاتھ سے اسکے بالوں میں انگلیاں چلانے لگا اور دوسرا اسکی کمر کو جکڑنے لگا ۔۔۔۔۔

دونوں ایک دوسرے میں کھو سے گئے ۔۔۔۔۔ اسکی بڑھتی شدتوں پر وہ اور مضبوطی سے اسکی شرٹ کو پکڑ گئی جب اچانک کمرے کے دروازے پر دستک ہوئی ۔۔۔۔۔ اور دونوں کو ایک دوسرے میں جکڑنے والا سحر سا ٹوٹا ۔۔۔۔۔۔

نینا اچانک آواز پر خوفزدہ سی ہوتی دھڑکتے دلکے ساتھ اسے پیچھے دھکیلتی بیڈ سے اتر کر بھاگی ۔۔۔۔ جیسے چور کے پیچھے پولیس پڑی ہو ۔۔۔۔۔اور باتھ روم گھس کر دروازہ بند کرتی اسکے ساتھ فرش پر بیٹھتی کانپتی گھٹنوں میں سر دیکر منہ چھپاگئی ۔۔۔۔۔۔اسکا سارا وجود کانپ رہا تھا ۔۔۔۔۔دل تھا کے جیسے باہر کو آرہا تھا ۔۔۔۔

جب پیچھے سے سنان کے بلند قہقہے سنائی دیے ۔۔۔۔۔ وہ اور مضبوطی سے خود کو بھینچ گئی ۔۔۔۔۔۔

اپنی اچانک بدلتی دل کی دھڑکنے اسے خوفزدہ کر گئی ۔۔۔۔۔ چہرا سرخ ہوکر تپنے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔ وہ گہرے سانس لیتی خود کو ریلیکس کرنے لگی پر ناکام ۔۔۔۔۔۔

خودبےخود ہونٹ ایسی حالت میں بھی مسکرا اٹھے ۔۔۔۔۔

*****************************

دروازے پر ملازمہ کو دیکھ سنان نے سرد آواز میں اسے جانا کا کہتے واپس دروازہ بند کرگیا ۔۔۔۔۔ اور ایک نظر باتھروم کے بند دروازے کو دیکھ کر مسکراتا ۔۔۔۔۔پھر وارڈروب سے اسکا اور اپنا ڈریس نکالنے لگا ۔۔۔۔۔۔

نینا کے لیے بلیک خوبصورت فراک اور اوور کوٹ نکال کر ایک اور سوئٹر نکالا پھر بلیک ٹوپی اور دستانے کے ساتھ لانگ بوٹ نکال کر باتھروم کے دروازے پر دستک دی ۔۔۔۔۔۔

نینا۔۔۔۔؟ اسکی پکار پر نینا بدک کر پیچھے ہوئی ۔۔۔۔اور کھڑی ہوکر پوچھنے لگی کانپتی آواز میں ۔۔۔۔

کک۔ ۔کیا ۔۔۔۔۔

چلنا نہیں کیا ۔۔۔۔۔ وہ مسکراہٹ روکے سنجیدہ سا پوچھا ۔۔۔۔

چچ۔ ۔چلنا ہے ۔۔۔۔۔ وہ بھرائی آواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔

اب وہ اپنی مسکراہٹ بھی نا روک سکا ۔۔۔۔۔ اور باتھروم کا دروازہ کھولکر بغیر اسے خوفزدہ کیے ڈریس دیکر واپس دروازہ بند کرگیا ۔۔۔۔۔ جلدی کرو لیٹ ہوجائیں گے ۔۔۔۔۔ اور اپنا ڈریس جرسی اٹھا کر دوسرے روم میں چلاگیا فریش ہونے ۔۔۔۔۔۔

نینا تو اسکے اچانک اندر آنے اور جانے پر جیسے شاک میں تھی ۔۔۔۔۔ وہ تو بغیر اسے دیکھے چلا بھی گیا تھا پر نینا ابھی تک ہل نہیں پارہی تھی ۔۔۔۔۔

جب دروازہ کھلنے کی آواز سنی تو ہوش میں آتے جلدی جلدی فریش ہوتی ۔۔۔۔۔ اسکا دیا ہوا ڈریس پہن کر باہر آئی ۔۔۔۔ پر سنان ابھی وہاں نہیں تھا ۔۔۔۔۔ وہ بیڈ پر کوٹ دستانے اور نیچے بلیک لانگ بوٹ دیکھ کر حیران ہو گئی ۔۔۔۔۔ جب سنان کے لفظ یاد آئے ۔۔۔۔ (ہم گھر سے بہت دور ہیں ) اسکے دماغ میں الجھن ہونے لگی اور وہ چلتی کھڑکی کے طرف آئی ۔۔۔۔۔

کھڑکی کھول کر اسکی نظریں جیسے نیچے زمین پر گرتی روئی نما برف پر پڑی تو اسے اپنی آنکھوں پر یقین نہیں ہوا ۔۔۔۔۔ وہ سب کچھ بھولا کر خوشی سے یاہوووو کہتی چیخی ۔۔۔۔۔۔

اور دروازے کی طرف دوڑ لگائی تو وہاں پر سنان کو پاکر خوشی سے منت سماجت کرنے لگی۔۔۔۔۔

پپپ۔ ۔۔پلیز مم۔ ۔مجھے نیچے جانے دیں پپ۔ ۔پلیز ۔۔۔۔۔ خوشی سے اسکا چہرا سرخ ہوگیا تھا ۔۔۔۔۔ وہ اپنی پسندیدہ چیزوں پر اتنی پاگل جنونی تھی کہ ننگے پائوں بغیر دوپٹے اور بھیگے بالوں سے برف میں جانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔

پپ۔ ۔پلیز دیکھو مم۔۔۔مینے آآ ۔۔۔آپکی بات مانی اب آپ جانے دیں ۔۔۔۔وہ اسے خاموش دیکھ پھر سے التجاکرنے لگی ۔۔۔۔۔

نہیں ڈارلنگ تمنے ابھی باتھ لیا ہے تو بیمار ہوجائو گی ۔۔۔۔۔ ہم نیکسٹ ٹائم انجوائے گرینگے ۔۔۔۔۔ وہ اسے سہولت سے مناکرتا بازوں سے پکڑ کر ڈریسنگ مرر کے سامنے لایا ۔۔۔۔ اور اسکے بالوں میں برش کرنے لگا ۔۔۔۔۔

نن۔ ۔نہیں ہوتی بب۔ ۔۔بیمار مجھے جانا ۔۔۔۔۔ وہ ضدی ہوکر بولی اور سر کو جھٹکے دیتی اسکے برش دیتے ہاتھوں کو ناکام کرنے لگی ۔۔۔۔۔

سنان اسے مسلسل ایسا کرتے دیکھ کچھ سخت آواز میں بولا ۔۔۔

اگر اب تمنے سر ہلایا تو مجھ سے برا کوئی نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔

نینا اپنی خوائش کے اتنے قریب آتے بغیر محسوس کیے جانے پر جیسے تڑپ ہی تو گئی تھی ۔۔۔۔۔

آآ۔ ۔۔آپ سے برا ہے بب۔ ۔بھی کوئی نہیں ۔۔۔۔ وہ روتی آنکھیں مسلتی غصے اور نارضگی سے بولی ۔۔۔۔۔

پر کچھ اسکی سخت آواز پر خاموش اسے مرر میں دیکھتی آنسو بہانے لگی کہ شاید رحم آجائے ۔۔۔۔ پر ایسا کچھ بھی نہیں ہوا ۔۔۔۔

وہ بھی خاموش اسکے لمبے بالوں کو کلپ میں جکڑے ۔۔۔۔۔ شانوں سے پکڑ کر بیڈ کے قریب لایا ۔۔۔۔۔نینا بھی نرم قالین پر پیر پٹکنے کے انداز میں رکھتی ساتھ زبردستی آئی ۔۔۔۔۔۔۔

اور سنان نے پہلے اسے سلیولیس سوئٹر فراک کے اوپر پہنا کر اور اسکے اوپر سے اوور کوٹ پہنایا ۔۔۔ جس میں وہ بالکل چھپ گئی تھی ۔۔۔۔۔ پر پھولے منہ غصے سے کچھ بھی نا بولی خاموش وہ جیسے کرتا گیا ویسے ہوتی گئی ۔۔۔۔۔ البتہ ہاتھ اور نظروں کی حرکت میں شدید غصہ اور نارضگی نمایا تھی ۔۔۔۔۔ جس پر سنان زبردستی اپنی مسکراہٹ روکے رکھا تھا ۔۔۔۔۔۔ وہ اسے ایسی کیوٹ لگ رہی تھی کہ دل کر رہا تھا ۔۔۔۔۔ اسکے پھولے سرخ رخساروں کو چوم لے ۔۔۔۔۔ پر ایسا نہیں کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ پتا نہیں غصے میں کیا کرے ۔۔۔۔

اسکے گلابی چھوٹے ہاتھوں میں دستانے پہنائے تو اسنے غصے سے اپنے ہاتھ جھٹک لیے پر وہ بغیر دھیان دیے کچھ سختی سے پھر پکر کر پہنانے لگا۔۔۔۔اور پھر اسکے سر پر ٹوپی پہناکر اسے بیڈ پر بٹھایا اور بوٹ پہنانے لگا ۔۔۔۔۔

نینا اسے اپنے ہر رویہ سے غصہ اور ناراضگی دیکھا رہی تھی ۔۔۔۔پر اس پر کوئی اثر نا دیکھتے پھوٹ پھوٹ کر رو دی ۔۔۔۔۔

مجھے جانا ہے ۔۔۔۔۔۔ زور زور سے زمین پر لانگ بوٹ میں مقید پائوں مارتی بولی ۔۔۔۔۔

پر سنان اسکی کاروائی پر بغیر دھیان دئے اپنے بازوں میں اٹھا کر روم سے نکلا ۔۔۔۔۔

نن۔ ۔۔۔نہیں جانا مجھے ۔۔۔۔۔ چھوڑو ۔۔۔۔ وہ بھی ہر کوشش ناکام دیکھ کر زور سے چیخی ۔۔۔۔ تینوں ملازمہ کی نظریں کوٹ میں چھپیسنان کے بازوں میں جھٹکے دیتی نیچے اترنے کے لیے اس پر پڑی تو بے ساختہ مسکرادیں ۔۔۔۔۔

انہیں وہ کافی پسند آئی تھی اپنے سر کے لیے ۔۔۔۔۔

جو تم چاہتی ہو وہ اس بار ناممکن ہے ۔۔۔۔ وہ بھی کچھ تیز آواز میں بولتا اسے چپ کرواگیا ۔۔۔۔۔ پر وہ مسلسل ہچکیاں دے رہی تھی ۔۔۔۔ سنان نے ایک گہرا سانس لیکر اسے چیئر پر بٹھایا اور اسکی ہچکیوں اور مزاہمت کی پرواہ کیے بغیر اسے ناشتا کروایا ۔۔۔۔ جو اسنے ہرہر نوالہ روتے کھایا ۔۔۔۔۔

پھر اسے لیکر ڈرائننگ روم سے لیکر لائونج میں آیا ۔۔۔۔۔ نینا کا روتا ہوا منہ کھل گیا گھر کو دیکھ کر ۔۔۔۔۔

سنان کو اچانک موبائل اور گاڑی کی چابی یاد آئی تو وہ اسے صوفے پر بٹھا کر باہر ناجانے کی ہدایت دیتا اوپر جانے لگا ۔۔۔۔۔۔

نینا ایکدم رونا بھولکر اسے جاتے دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔ اسکے کمرے میں قدم رکھتے ہی وہ اوور کوٹ جو بھاری تھا اتار کر پھینکتی داخلی دروازے کی سمت بھاگی ۔۔۔۔۔۔

اور ایک نظر پیچھے مڑکر دیکھا تو کوئی نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔ خوشی کی ایک لہر اسکے تن بدن میں دوڑی ۔۔۔۔۔

ٹوپی اور سلیولیس سوئٹر پہنے باہر ٹھرٹھراتی جسم کو سن کرنے والی برف میں بھاگتی جاکر گھٹنو کے بل گری اور اوپر سے گرتی برف کو وہاں پر لیٹ کر محسوس کرنے لگی ۔۔۔۔۔وہ اس سہانے موقعے سے پورا فائدہ اٹھانے لگی ۔۔۔۔

پھر خوشی سے اٹھی اور مٹھیاں بھر بھر خود کے اوپر ڈالنے لگی ۔۔۔۔۔۔یہاں تک کہ بلیک فراک بھی سفید ہوگیا ۔۔۔۔۔ ناک اور چہرا ٹھنڈ سے سرخ نیلا ہونےلگا ۔۔۔۔۔۔ ابھی اسے لمحہ بھی نہیں گذرا تھا کہ یہ حال تھا ۔۔۔۔۔۔

پر وہ اس سب کی پروا کیے بغیر برف سے کھیلتی رہی ۔۔۔۔۔۔

سنان چابی اور موبائل لیکر سیڑھیاں اترتا نیچے آیا تو صوفے کے قریب نیچے پڑے اسکے اوور کوٹ کو دیکھ وہ بھاگتا ہوا تیزی سے نیچے آیا اور اسے اٹھاکر ملازموں پر چیخا جس وہ سب ہڑبڑا گئی ۔۔۔۔

س۔ ۔سوری سر یہی تھی۔۔۔۔۔۔ کہتی سر جھکا گئی ۔۔۔۔۔

یہاں کیوں کھڑی ہو جائو سوئٹر اور شال لیکر آئو ۔۔۔۔وہ دھاڑا تو تینوں ہڑبڑا کر اوپر کو بھاگی ۔۔۔۔۔

اور سنان وہ کوٹ اٹھائے باہر بھاگا ۔۔۔۔۔۔ وہ کیسے بھول گیا کہ وہ کتنی ضدی ہے ۔۔۔۔۔

وہ جیسے باہر لان میں آیا تو سامنے ہی وہ برف پر بیٹھی اس سے کھیل رہی تھی ۔۔۔۔اور شاید خوش سے چیخ بھی رہی تھی ۔۔۔۔۔نیلی پڑتی۔ ۔۔۔

اسکا ہاتھ خودبے خود بل پڑے ماتھے پر گیا ۔۔۔۔۔ اور دوڑ کر اس تک پہنچا ۔۔۔۔۔۔

کبھی نہیں سدھر سکتی ۔۔۔۔۔ میں نے کہاں تھا نا کہ مت جانا باہر اب اپنا حال دیکھو ۔۔۔۔۔ غصے میں بولتا اسکے کانپتے یخ ٹھنڈے وجود کو باہوں میں بھر کر وہاں سے گاڑی کی طرف بھاگا ۔۔۔۔۔۔۔ وہ کلفی کی طرح بن گئی تھی ایک منٹ میں اسکا یہ حال تھا ۔۔۔۔ کہ کوئی مزاہمت نہیں کرپارہی تھی ۔۔۔۔۔۔ شاید وہ سنان کے منا کرنے سے اس حد تک چلی گئی تھی ضد میں ۔۔۔۔۔

گاڑی کی چابی ملازمہ کو دی تو اسنے جلدی سے دروازہ کھولا وہ خود بوکھلائی ہوئی تھیں ۔۔۔۔۔ سنان نے اسے اندر فرنٹ سیٹ پر ڈالکر ملازموں سے دو شال اور سوئٹرز لیکر خود دوسری طرف سے آیا ۔۔۔۔۔

نینا ایسے ہی پڑی تھی سیٹ پر ۔۔۔۔۔۔ سنان نے ہیٹر چلایا اور دونوں طرف دروازے بند کیے ۔۔۔۔۔۔ ملازموں کو اسنے جانے کا بول دیا تھا ۔۔۔۔۔

اسکے ہاتھوں سے دستانے اتار کر اپنے ہاتھوں میں اسکے ٹھنڈے ہاتھوں کو کچھ دیر رگڑا ۔۔۔۔۔ اور پھر دوسرے پہناکر اسے تین موٹے سوئٹرز پہنائے اور اوپر اوور کوٹ پہنایا اسکے گرد ڈبل شال اوڑھلیں۔۔۔۔ شال میں چھپے اسکے ماتھے پر اپنے لب رکھ دئے ۔۔۔۔۔

جان نکال دیتی ہو ۔۔۔۔۔ بدتمیز لڑکی ۔۔۔۔۔۔ اسکے گالوں چھوکر اسکے بھالو نما سر کو اپنے کندھے پر ٹکائے گاڑی اسٹارٹ کردی ا

ور وہاں سے نکلتا چلاگیا ۔۔۔۔۔۔

https://www.barbienovels.com/my-possessive-mafia-episode-1/

By barbie boo

Hey! I'm Barbie a novelist. I'm a young girl with a ROMANTIC soul. I love to express my feelings by writing.

Leave a Reply

Your email address will not be published.